عنوان: ایک سلام سے چار رکعت نفل پڑھنے کا حکم    (102230-No)  

سوال: مفتی صاحب ! کیا نفل نمازچار رکعت کی ہوتی ہے؟ اگر ایسا ہے تو کون سی نماز ہے؟

جواب: واضح رہے کہ دن میں ایک سلام کے ساتھ زیادہ سے زیادہ چار رکعات نفل ادا کر سکتے ہیں، جیسے صلوۃ التسبیح، اور اس سے زیادہ ایک سلام کے ساتھ پڑھنا مکروہ ہے، اور رات میں زیادہ سے زیادہ آٹھ رکعات نفل ایک سلام کے ساتھ ادا کر سکتے ہیں اور اس سے زیادہ ایک سلام کے ساتھ پڑھنا مکروہ ہے۔
_________
دلائل:
کما فی الترمذی:
حَدَّثَنَا إِسْحَاق بْنُ مُوسَى الْأَنْصَارِيُّ، حَدَّثَنَا مَعْنٌ، حَدَّثَنَا مَالِكٌ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي سَعِيدٍ الْمَقْبُرِيِّ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ أَنَّهُ أَخْبَرَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ سَأَلَ عَائِشَةَ:‏‏‏‏ كَيْفَ كَانَتْ صَلَاةُ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِاللَّيْلِ فِي رَمَضَانَ ؟ فَقَالَتْ:‏‏‏‏ مَا كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَزِيدُ فِي رَمَضَانَ وَلَا فِي غَيْرِهِ عَلَى إِحْدَى عَشْرَةَ رَكْعَةً، ‏‏‏‏‏‏يُصَلِّي أَرْبَعًا فَلَا تَسْأَلْ عَنْ حُسْنِهِنَّ وَطُولِهِنَّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يُصَلِّي أَرْبَعًا فَلَا تَسْأَلْ عَنْ حُسْنِهِنَّ وَطُولِهِنَّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يُصَلِّي ثَلَاثًا فَقَالَتْ عَائِشَةُ:‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَتَنَامُ قَبْلَ أَنْ تُوتِرَ ؟ فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا عَائِشَةُ إِنَّ عَيْنَيَّ تَنَامَانِ وَلَا يَنَامُ قَلْبِي . قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ.

(کتاب الصلاۃ، باب ما جاء فی وصف صلاۃ النبي صلی اللہ علیہ وسلم باللیل، ج:2/233، دار الحدیث، القاھرۃ)

وفیہ ایضا:
وَقَدْ رُوِيَ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ كَانَ يُصَلِّي بِاللَّيْلِ مَثْنَى مَثْنَى وَبِالنَّهَارِ أَرْبَعًا۔
(کتاب الجمعۃ، باب ما جاء ان صلاۃ اللیل والنھار مثنی مثنی، ج:2/378، دار الحدیث، القاھرۃ)

کما فی الرد المحتار:
(وتکرہ الزیادۃ علی اربع فی نفل النھار، وعلی ثمان لیلا بتسلیمۃ)لانہ لم یرد (والافضل فیھما الرباع بتسلیمۃ) وقالا: فی اللیل المثنی افضل، وبہ یفتی۔
(کتاب الصلاۃ، باب الوتر والنوافل، ج2/455، دار عالم الکتب، الریاض)

وکذا فی اعلاء السنن:
والاصل فی ذالک ان النوافل شرعت تبعا للفرائض والتبع لا یخالف الاصل فلوزید علی الاربع فی النھار لخالفت الفرائض وھذا ھو القیاس فی اللیل الا ان الزیادۃ علی الاربع الی الثمان او الیٰ الست عرفناہ بالنص وھو ماروی عن النبی علیہ الصلوۃ والسلام انہ کان یصلی باللیل خمس رکعات، سبع رکعات تسع رکعات، احدی عشرۃ رکعۃ ثلاث عشرۃ رکعۃ والثلاث من کل واحد من ھذہ الاعداد الوتر (والظاھر لفظ الحدیث وان کان یشعر بوصل الوتر بالتطوع وانہ صلاھما جمیعاً بتسلیمۃ واحدۃ ولکن حدیث عائشۃرضی اللہ عنھا عن احمد وابی داؤد (کان علیہ الصلوۃ والسلام یوتر باربع وثلاث وست وثلاث، وثمان وثلاث وعشرۃ وثلاث‘‘ صریح فی انہ کان یفصل ثلاث الوتر عن التطوع وقد مرانہ حسن الاسناد ورکعتان من ثلاثۃ عشر سنۃ الفجر…الخ
(کتاب الصلاۃ)


واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

(مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com

نماز میں مزید فتاوی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

16 Oct 2019
جمعرات 17 اکتوبر - 17 صفر 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2019. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com