عنوان: کچھ آیات کا صرف اردو ترجمہ لکھنے کا حکم (104051-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! قرآن مجید میں کچھ آیتیں ایسی ہیں، جو اخلاق کو سنوارنے کے لیے نہایت کارآمد ہیں، تو کیا انکے معنی کو الگ سے لکھ کر رکھا جا سکتا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ مکمل قرآن کریم کا عربی رسم الخط میں آیات لکھے بغیر کسی اور زبان میں محض ترجمہ شائع کرنا جائز نہیں ہے۔

البتہ مذکورہ مقصد کیلئے ایک دو آیات کا الگ سے، عربی رسم الخط کے بغیر، صرف اردو ترجمہ لکھنے کی گنجائش ہے، بشرطیکہ ترجمہ مستند اور باحوالہ ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی الاتقان فی علوم القرآن:
قال اشہب ؒ سئل مالک ہل یکتب المصحف علیٰ مااحدثہ الناس من الہجاء فقال لاالاعلیٰ الکتبۃ الاولیٰ رواہ الدانی فی المقنع ثم قال ولامخالف لہ من علماء الامۃ
وقال الامام احمدیحرم مخالفۃ خط مصحف عثمان ؒفی واو او یاء اوالف اوغیرذلک۔
وقال البیہقی فی شعب الایمان من یکتب مصحفاً فینبغی ان یحافظ علیٰ الہجاء الذی کتبوابہ تلک المصاحف ولایخالفہم فیہ ولایغیرمماکتبوہ شیأً فانہم کانوااکثرعلماواصدق قلباولسانا واعظم امانۃ منافلاینبغی ان نظن بانفسنااستدراکاً علیہم۔
(النوع السادس والسبعون فی مرسوم الخط، ج2،ص167، ط۔ دارالفکر بیروت)

وفی فتح القدیر:
 وفي الکافي: إن اعتاد بالفارسیة أو أراد أن یکتب مصحفًا بہا یمنع فإن فعل آیة أو آیتین لا، فإن کتب القرآن وتفسیر کل حرف وترجمتہ جاز۔
(ج1، ص826)


وفی البنایة:
ویجوز کتابة آیة او آیتین، والاکثر منھا لایجوز
(ج11، ص268، مسائل متفرقہ، ط۔دارالفکر بیروت)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 337
kuch aayat ka sirf urdu tarjama / tarjuma likhnay ka hukam / hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Interpretation of Quranic Ayaat

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com