عنوان: کمیشن میں اجرت فیصد کے اعتبار سے مقرر کی جائے یا قیمت کے اعتبار سے؟(4724-No)

سوال: مفتی صاحب ! میں نے زید سے کہا کہ میں آپ کے پاس فلیٹ کی پارٹی لاتا ہوں، آپ مجھے پانچ ہزار (5000) کمیشن دیں گے، اس نے قبول کر لیا، کیونکہ اس کو یقینی طور پر ایک کرایہ دار کا دس ہزار (10) کمیشن ملنا تھا، تو کیا بغیر فیصد متعین کیے اس طرح رقم طے کرنا درست ہے؟

جواب: ایجنٹ (دلال) کے لیے متعین اجرت یعنی فکس رقم مثلاً: سوال کے مطابق پانچ ہزار روپے یا فیصدی حصہ کے طور پر اجرت مثلاً : تین فیصد وغیرہ، دونوں طرح اجرت مقرر کرنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (63/6، ط: سعید)

قال في التتارخانية: وفي الدلال والسمسار يجب أجر المثل، وما تواضعوا عليه أن في كل عشرة دنانير كذا فذاك حرام عليهم. وفي الحاوي: سئل محمد بن سلمة عن أجرة السمسار، فقال: أرجو أنه لا بأس به وإن كان في الأصل فاسدا لكثرة التعامل وكثير من هذا غير جائز، فجوزوه لحاجة الناس إليه كدخول الحمام وعنه قال: رأيت ابن شجاع يقاطع نساجا ينسج له ثيابا في كل سنة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1857 Jul 03, 2020
commision / comision me ujrat ke / kay aitbar / etbaar se / say muqarrar ki jay ya qeemat ke / kay aitbar se / say, Should the wages in commission be fixed in terms of percentage or in terms of price?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.