عنوان: نیٹ ورک مارکیٹنگ(Network Marketing) کا حکم(4927-No)

سوال: مفتی صاحب ! نیٹ ورک مارکیٹنگ جائز ہے یا ناجائز ہے؟

جواب: نیٹ ورک مارکیٹنگ(Network Marketing) یا ملٹی لیول مارکیٹنگ (Multi Level Marketing) کے طریقہ کار کے مطابق بہت سی کمپنیاں کام کر رہی ہیں، جس کے تحت کم قیمت کی چیزیں مہنگے داموں میں فروخت کی جاتی ہیں، اور اس کے ساتھ ساتھ آگے ممبر بنا کر اس پر کمیشن دینے کی پیشکش کی جاتی ہے، لوگ کمیشن کی لالچ میں کم قیمت کی چیزیں مہنگے داموں میں خریدتے ہیں، جو شرعا جوئے کی ایک شکل ہے، نیز نیٹ ورک مارکیٹنگ کا مروجہ طریقہ کار دیگر بہت سے غیر شرعی امور (مثلا غرر، مختلف معاملات کو ایک دوسرے کے ساتھ مشروط کرنے، اور دیگر فاسد شرائط) پر مشتمل ہونے کی وجہ سے جائز نہیں ہے، اس سے اجتناب لازم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

أحکام القرآن للجصاص: (329/1، ط: دار الکتب العلمیة)
"ولا خلاف بین أہل العلم في تحریم القمار"

مسند أحمد: (324/6، ط: مؤسسة الرسالة)
"عن عبد الرحمن بن عبد الله بن مسعود، عن أبيه، قال: " نهى رسول الله صلى الله عليه وسلم عن صفقتين في صفقة واحدة"

بدائع الصنائع: (فصل في شروط جواز السابق، 350/8، ط: دار الکتب العلمیة)
"ولو کان الخطر من الجانبین جمیعًا ولم یدخلا فیہ محللاً لا یجوز؛ لأنہ في معنی القمار، نحو أن یقول أحدہما لصاحبہ: إن سبقتني فلک عليّ کذا، وإن سبقتک فلي علیک کذا، فقبل الآخر"

الموسوعة الفقهیة الکویتیة: (409/39، ط: وزارة الاوقاف)
"وقال المحلي: صورة القمار المحرم التردد بين أن يغنم وأن يغرم"

کذا فی تبویب فتاوی دار العلوم کراتشی: رقم الفتوی: 31/1115

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 2770 Jul 27, 2020
net work maketing ka hokom / hokum, Ruling / Order of Network Marketing

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.