عنوان: استخارہ کرنا یا فال نکلوانا (105258-No)

سوال: اپنے کسی کام کے سلسلے میں استخارہ کرنا کیسا ہے؟ اور اسی طرح فال نکلوانے کا شرعی حکم کیا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ سنت کے مطابق استخارہ کرنا مسنون ہے، حدیث شریف میں استخارہ کرنے کے بارے میں ترغیب آئی ہے، البتہ فال نکلوانا اور اس پر یقین کرنا جائز نہیں ہے، ایک روایت میں ہے کہ "جس نے فال نکالنے والے سے کچھ پوچھا، اس کی چالیس راتوں کی نماز قبول نہیں کی جائے گی"۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الحدیث النبوی:

عن جابر بن عبد ﷲ قال کان رسول اﷲ ﷺیعلمنا الا ستخارۃ فی الامور کلھا کما یعلمنا السورۃ من القرآن یقول اذا ھم احدکم بالا مر فلیرکع رکعتین۔۔۔۔۔الخ

(مشکوٰۃ شریف ص 116 باب التطوع الفصل الاول)

کما فی الحدیث النبوی:

عن صفية عن بعض أزواج النبي صلى الله عليه وسلم عن النبي صلى الله عليه وسلم، قال: « من أتى عرافاً فسأله عن شيء لم تقبل له صلاة أربعين ليلةً».
رواه مسلم".

(مشکوٰۃ ج:2 ص:411)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 366
istikhara karna ya faal nikalwana

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com