عنوان: شادی میں دف بجانے کا حکم(5702-No)

سوال: السلام عليكم، مفتی صاحب ! کیا آج کل دف استعمال کرنا جائز ہے؟

جواب: واضح رہے کہ دف بجانے سے مقصود نکاح کا اعلان و تشہیر کرنا ہوتی ہے، تاکہ لوگوں کو اس کی اطلاع ہوجائے۔
لہذا نکاح کے موقع پر دف بجانے کی جو اجازت دی گئی ہے وہ مندرجہ ذیل شرائط کے ساتھ دی گئی:
۱۔ ایسا دف ہو جو بالکل سادہ اور تھال نما ہو، جس میں ”گھنگھرو“ (چھن چھن کرنے والے آلات) لگے ہوئے نہ ہوں۔
لہذا ہمارے معاشرے میں جو چیز دف کے نام سے ہے، جس میں اسٹیل کی چھوٹی چھوٹی پلیٹیں لگی ہوئی ہوتی ہیں، جس سے ایک خاص قسم کے ساز کی آواز پیدا ہوتی ہے، اس کے استعمال کی شرعاً اجازت نہیں ہے۔
۲۔ کسی خاص گانے کے انداز میں پیشہ ور لوگوں کی طرح نہ بجایا جائے اور موسیقی کے قواعد کے مطابق نہ بجایا جائے، تاکہ اس سے کیف ومستی پیدا نہ ہو۔
۳۔ دف بجانے والی اگر بچیاں ہوں، تو وہ چھوٹی ہونی چاہئیں اور وہ پیشہ ورانہ طور گانے والی نہ ہوں۔
٤۔ گیت کے اشعار کا مضمون غیر شرعی نہ ہو۔
٥- تھوڑی دیر تک بجایا جائے۔
ان مذکورہ بالا شرائط کا لحاظ کرکے دف بجانا اور اشعار کا پڑھنا جائز ہے ورنہ ناجائز ہوگا۔
البتہ ہمارے زمانے میں لوگ ایسے مواقع پر شریعت کی دی ہوئی حدود کا لحاظ نہیں رکھتے اس لئے ان چیزوں ںسے احتیاط ہی بہتر ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحیح البخاری: (773/2)
قالت الربيع بنت معوذ ابن عفراء، جاء النبي ﷺ فدخل حين بني علي، فجلس على فراشي كمجلسك مني، فجعلت جويريات لنا، يضربن بالدف ويندبن من قتل من آبائي يوم بدرإذقالت إحداهن: وفينا نبي يعلم ما في غد، فقال:دعي هذه، وقولي بالذي كنت تقولين".

مشکوۃ المصایبح: (باب الخمر و وعید شاربھا، 318/2)
وعن أبي أمامة قال : قال النبي ﷺ : " إن الله تعالى بعثني رحمة للعالمين وهدى للعالمين وأمرني ربي عز وجل بمحق المعازف والمزامير والأوثان والصلب وأمر الجاهلية وحلف ربي عز وجل : بعزتي لا يشرب عبد من عبيدي جرعة خمر إلا سقيته من الصديد مثلها ولا يتركها من مخافتي إلا سقيته من حياض القدس " . رواه أحمد

احکام القرآن للتھانوی: (226/3)
"لان الغناء یطلق علی رفع الصوت وعلی الترنم الذی تسمیہ العرب النصب وعلی الحداء ولا یسمی فاعلہ مغنیا ۔۔۔ ثم ھذا کلہ کلام علی الغناء من حیث انہ غناء مع قطع النظر عما ینضم الیہ محن المنکرات والمعاصی عادۃ باجتماع اھل الھوی والسماع عن النساء والاجنبیات او من الامارد او سماع ما یتضمن الحرام من الکلام کالتشبیب بامراۃ مسماۃ معروفۃ حیۃ او کغیبۃ انسان ۔۔۔ فانہ حرام باطباق النصوص وباجماع المسلمین لایختلف فیہ مسلمان اھ۔".

و فیه ایضاً: (234/3)
"قد تلخص مما ذکرنا من روایات المذھب واقوال المشائخ الحنفیۃ قدس اسرارھم انھم اتفقوا علی تحریم الآلات المطربۃ بنفسھا من دون الغناء وعدوا الدف الذی فیہ الجلاجل منھا کمافی ردالمحتار والبحر۔ واختلفوا فی الدف والقضیب وامثالھما فی النکاح وامثالہ ۔۔۔ وانھم اتفقوا علی اباحۃ الغناء لنفسہ بشرائط".

رد المحتار: (350/6، ط: دار الفکر)
"وعن الحسن لا بأس بالدف في العرس لیشتہر وفي السراجیة: ہذا إذا لم یکن لہ جلاجل ولم یضرب علی ہیئة التطرب".

الدر المختار: (349/6، ط: دار الفکر)
"و في البزازیة: استماع صوت الملاھي کضرب قصب ونحوہ حرام لقولہ علیہ الصلاة والسلام: ”استماع الملاہي معصیة والجلوس علیہا فسق والتلذذ بہا کفر“ أي بالنعمة".

امداد الفتاوی: (307/2)

کذا فی تبویب فتاوي دار العلوم کراتشي: رقم الفتوی: 49/1883

کذا فی فتاویٰ بنوری تاؤن: رقم الفتوی: 143908200846

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 2706 Nov 16, 2020
shadi mai daff bajanay ka hukum, The command / ruling / order to play the tambourine / daff at a wedding

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.