عنوان: کیا مومن ہونے کے لئے تصدیق بالقلب کے ساتھ اقرار باللسان شرط ہے؟(106944-No)

سوال: مفتی صاحب ! میرا سوال یہ ہے کہ اگر کسی شخص کے دل میں ایمان ہے، لیکن اس نے اقرار باللسان نہیں کیا ہے، تو کیا یہ شخص مسلمان کہلائے گا؟

جواب: واضح رہے کہ اقرار باللسان تصدیقِ قلبی کی علامت اور اسلامی اَحکام جاری کرنے کے لیے شرط ہے، لہٰذا کسی شخص کو تصدیق قلبی تو حاصل ہے،لیکن کسی عذر مثلاً خوف کی وجہ سے اقرار نہیں کرتا تو وہ مسلمان شمار ہوگا٫ البتہ دنیا میں مسلمانوں والے اَحکام(مثلاً جنازہ پڑھنا اور مسلمانوں کے قبرستان میں دفن ودیگر مسلمانوں کے ساتھ مخصوص اَحکام)جاری کرنے کے لیے کم سے کم ایک مرتبہ اقرار بالسان ضروری ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی ارشادالساری للقسطلانی:

وذهب جمهور المحققين إلى أنه هو التصديق بالقلب وإنما الإقرار شرط لإجراء الأحكام في الدنيا، كما أن تصديق القلب أمر باطني لا بد له من علامة اهـ-

(ج:١ ٫ ص: ٨٦ ٫ ط: المطبعة الكبرى الأميرية)

و فی شرح العقائد:

وذهب جمهور المحققين إلى أنه هو التصديق بالقلب وإنما الإقرار شرط لإجراء الأحكام في الدنيا،لما ان التصدیق امر باطن له من علامة فمن صدق في قلبه ولم یقر بلسانه فهو مؤمن عندﷲ سبحانه وإن لم یکن مؤمناً في أحکام الدنیا۔

(ص: ٢٩٢ ٫ ط: مکتبہ بشری)

و فی النبراس شرح شرح العقائد:


إنه هو التصدیق بالقلب، وإنما الإقرار شرط لإجراء الأحکام في الدنیا من حرمة الدم والمال وصلاة الجنازة علیه ودفنه في مقابر المسلمین ‘۔

(ص:٣٩٤ ٫ط: رشیدیہ)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 160
kia momin honay kay liye tasdeeq bil qalb kay sath iqrar billisaan shart hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.