عنوان: بینک میں امامت کرنا اور اس کے عوض بینک یا بینک ملازمین کی طرف سے ملنے والی تنخواہ کا حکم(107037-No)

سوال: مفتی صاحب ! بینک میں امامت کرنا کیسا ہے اور اس پر بینک یا بینک ملازمین آپس میں چندہ کرکے مؤذن یا امام کو تنخواہ ادا کریں تو وہ تنخواہ لینا جائزہے یا نہیں؟

جواب: بینک میں امامت کرنا جائز ہے٬ جہاں تک امامت کے عوض بینک سے ملنے والی تنخواہ کا حکم ہے٬ تو اس میں تفصیل یہ ہے کہ مستند علماء کرام کی زیرنگرانی شرعی اصولوں کے مطابق کام کرنے والے غیر سودی بینک سے امامت کی تنخواہ لینے میں کوئی قباحت نہیں ہے٬ نیز سودی بینک میں موجود ساری کی ساری رقوم سودی اور حرام نہیں ہوتیں، بلکہ اس میں کئی قسم کی حلال اور حرام رقمیں مخلوط ہوتی ہیں٬ جبکہ بینک میں موجود اکثر رقوم حلال ہوتی ہیں، لھذا اگر بینک اس مجمومی مخلوط رقم سے امام یا موذن کو تنخواہ دے٬ تو وہ تنخواہ حرام نہیں ہوگی۔

جہاں تک بینک ملازمین کا اپنی طرف سے امام یا موذن کو تنخواہ دینے کا تعلق ہے٬ تو اس کا حکم یہ ہے کہ اگر وہ بینک مستند علماء کرام کی زیرنگرانی شرعی اصولوں کے مطابق کام کر رہا ہے٬ تو وہاں کام کرنے والے ملازمین کی تنخواہیں حلال ہیں٬ اس لئے امام یا موذن کیلئے ان سے تنخواہ لینا جائز ہے٬ جبکہ سودی بینک میں جن ملازمین کو ناجائز کام کے عوض تنخواہ ملتی ہے٬ تو چونکہ ناجائز کام کے عوض تنخواہ حلال نہیں ہے٬ اور حرام رقم سے امام یا موذن کو تنخواہ دینے سے وہ رقم حلال نہیں ہوگی٬ بلکہ وہ بدستور حرام ہی رہتی ہے٬ لہذا بینک ملازمین کا اپنی حرام آمدنی سے امام/موذن کو تنخواہ دینا جائز نہیں ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


لما فی الفتاوى الهندية:

"أهدى إلى رجل شيئاً أو أضافه، إن كان غالب ماله من الحلال فلا بأس، إلا أن يعلم بأنه حرام، فإن كان الغالب هو الحرام ينبغي أن لايقبل الهدية ولايأكل الطعام، إلا أن يخبره بأنه حلال ورثته أو استقرضته من رجل، كذا في الينابيع ۔ ولا يجوز قبول هدية أمراء الجور ؛ لأن الغالب في مالهم الحرمة إلا إذا علم أن أكثر ماله حلال، بأن كان صاحب تجارة أو زرع فلا بأس به ؛ لأن أموال الناس لا تخلو عن قليل حرام، فالمعتبر الغالب، وكذا أكل طعامهم"

(الفتاوی الھندیۃ: ٥/ ٣٤٢)

وفی الدرالمختار مع الرد:

"(قولہ الحرام ینتقل) ای تنتقل حرمتہ وان تداولتہ الایدی وتبدلت الاملاک، قولہ: ولا للمشتری منہ فیکون بشرائہ منہ مسیئا لانہ ملکہ بکسب خبیث وفی شرائہ تقریر للخبث ویؤمر بما کان یؤمر بہ البائع من ردہ علی الحربی"

(۴:۱۴۵ مطلب البیع الفاسد لا یطیب لہ ویطیب للمشتری منہ)

کذا فی تبویب جامعہ دارالعلوم کراچی٬ (رقم الفتوی: 85/105)

و اللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 449
bank mai imamat karna or us kay ewaz bank ya bank mulazimeen ki taraf se milnay wali tankhuwah ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.