عنوان: انقلابِ ماھیت کی حقیقت (100073-No)

سوال: مفتی صاحب ! اگر کسی چیز کی حقیقت بدل جاۓ تو کیا اس کا حکم بھی بدل جاتا ہے؟ حدیث بریرہ سے تبدیل ماہیت کا استدلال کرنا درست ہے؟

جواب: قلبِ ماہیت یہ ہے کہ پچھلی حقیقت ختم ہوکر نئی حقیقت ونئی ماہیت بن جائے، نہ پہلی حقیقت وماہیت باقی رہے، نہ اس کا نام باقی رہے، نہ اس کی صورت وکیفیت باقی رہے، نہ اس کے خواص وآثار وامتیازات باقی رہیں، بلکہ سب چیزیں نئی ہوجائیں، نام بھی دوسرا، صورت بھی دوسری، آثار وخواص بھی دوسرے، اثرات و علامات اور امتیازات بھی دوسرے پیدا ہوجائیں، جیسے: شراب سے سرکہ بنالیا جائے۔
اور انقلابِ ماہیت ممکن ہے، عقل و شرع نے اس کو تسلیم کیا ہے، احناف کا مفتی بہ مذہب بھی یہی ہے کہ انقلابِ حقیقت اور تبدیل ماہیت ممکن ہے۔
2_حدیث بریرہ بخاری شریف میں ہے، لیکن اس حدیث سے ماہیت کی تبدیلی پر استدلال کرنا درست نہیں، کیونکہ اس حدیث میں ملکیت کی تبدیلی سے عین یعنی اس چیز کی ذات کی تبدیلی ہوتی ہے، جب کہ قلب ماہیت میں ذات ہی تبدیل ہو جاتی ہے، لہذا اس حدیث سے ماہیت کی تبدیلی پر استدلال کرنا درست نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار مع رد المحتار: (327/1، ط: دار الفکر)
. (لا) يكون نجسا (رماد قذر) وإلا لزم نجاسة الخبز في سائر الأمصار (و) لا (ملح كان حمارا) أو خنزيرا ولا قذر وقع في بئر فصار حمأة لانقلاب العين به يفتى
(قوله: لانقلاب العين) علة للكل، وهذا قول محمد، وذكر معه في الذخيرة والمحيط أبا حنيفة حلية. قال في الفتح: وكثير من المشايخ اختاروه، وهو المختار؛ لأن الشرع رتب وصف النجاسة على تلك الحقيقة وتنتفي الحقيقة بانتفاء بعض أجزاء مفهومها فكيف بالكل؟ فإن الملح غير العظم واللحم، فإذا صار ملحا ترتب حكم الملح. ونظيره في الشرع النطفة نجسة وتصير علقة وهي نجسة وتصير مضغة فتطهر، والعصير طاهر فيصير خمرا فينجس ويصير خلا فيطهر، فعرفنا أن استحالة العين تستتبع زوال الوصف المرتب عليها. اه.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 733
inqelaab/inqilaab e mahyat/mahiat ki haqeeqat/hakeekat , What is "state change"?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Miscellaneous

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.