عنوان: ہر سوال کا جواب دینا مفتی پر لازم نہیں ہے۔(107590-No)

سوال: مفتی صاحب ! ہمارے مسجد کے امام صاحب جنہوں نے مفتی کا کورس بھی کیا ہے، وہ بعض دفعہ سوال کا جواب نہیں دیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہر سوال کا جواب دینے والا مفتی نہیں ہوتا ہے، کیا یہ بات درست ہے؟

جواب: جی ہاں! مفتی پر ہر سوال کا جواب دینا لازم نہیں ہے، لہٰذا اگر وہ اپنی دور اندیشی سے کسی سوال کا جواب دینا مناسب نہ سمجھے، تو اس پر جواب دینا لازم نہیں، بلکہ فقہاء نے لکھا ہے کہ ہر سوال کا جواب دینے والا مفتی نہیں، بلکہ مجنون ہے، اس لئے مفتی کو ہر سوال کا جواب دینے میں بہت محتاط ہونا ضروری ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


لما فی جامع بيان العلم وفضله لابن عبد البر:

أخبرنا عبد الله بن محمد بن عبد المؤمن، نا محمد بن بكر، نا أبو داود، نا محمد بن بشار، نا عبد الرحمن بن مهدي، ثنا مالك بن أنس، عن يحيى بن سعيد قال: قال ابن عباس: «إن من أفتى الناس في كل ما يسألونه عنه لمجنون» ورواه وهب، عن مالك قال: بلغني عن عبد الله بن عباس فذكره، قال مالك: وبلغني عن ابن مسعود مثل ذلك، ذكره أبو داود أيضا عن الحارث بن مسكين، عن ابن وهب، عن مالك، وذكره يحيى بن مزين عن القعنبي، عن مالك

(حدیث نمبر: ۲۲۰۴، ج: ۲ ، ص: ۱۱۲۳، ط: دار ابن جوزی)

وفی اعلام الموقعین لابن قیم الجوزیۃ:

قال مالك، عن يحيى بن سعيد؛ قال: قال ابن عباس: إن كلَّ من أفتى الناسَ في كل ما يسألونه [عنه] لمجنون۔

(ج: ۲،ص: ۶۳، ط : دار ابن جوزی)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 234
har sawal ka jawab dena mufti par laazim nahi

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Miscellaneous

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.