عنوان: بیوہ کا عدت کے بعد دوسرا نکاح کرنے اور والدین اور رشتہ داروں کا اس نکاح سے روکنے کا حکم(7614-No)

سوال: میں بیوہ ہوں اور اپنی عدتِ وفات گزار چکی ہوں اور اب دوسری جگہ نکاح کرنا چاہتی ہوں، لیکن میرے والدین اور رشتہ دار دوسرا نکاح کرنے سے روک رہے ہیں، کیا میرے لئے اس روکنے کی مخالفت کرتے ہوئے دوسری جگہ نکاح کرنا جائز ہے؟

جواب: صورتِ مسئولہ میں عدت گزارنے کے بعد اگر آپ اپنا نکاح اپنے کفو میں کر رہی ہیں، تو آپ کا دوسرا نکاح کرنا جائز ہے اور والدین اور رشتہ داروں کو دوسرے نکاح سے روکنے کا حق حاصل نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (البقرة، الآیۃ: 234)
وَالَّذِيْنَ يُتَوَفَّوْنَ مِنْكُمْ وَيَذَرُوْنَ اَزْوَاجًا يَّتَرَبَّصْنَ بِاَنفُسِهِنَّ اَرْبَعَةَ اَشْهُرٍ وَّعَشْرًا فَإِذَا بَلَغْنَ اَجَلَهُنَّ فَلَا جُنَاحَ عَلَيْكُمْ فِيمَا فَعَلْنَ فِي اَنفُسِهِنَّ بِالْمَعْرُوفِ وَاللهُ بِمَا تَعْمَلُونَ خَبِيْرٌo

الفتاوی الخانیۃ: (87/1)
وفي ظاهر الرواية عن أبي حنيفة رحمه الله تعالى أنه يجوز النكاح بكراً كانت أو ثيباً زوجت نفسها كفؤا أو غير كفء الا انه إذا لم يكن كفأ كان للأولياء حق الاعتراض وروي الحسن عن أبي حنيفة رحمه الله تعالى أنه يجوز النكاح ان كان كفأ وإن لم يكن كفأ لا يجوز النكاح أصلاً واختلفت الروايات عن أبي يوسف رحمه الله تعالى والمختار في زماننا للفتوى رواية الحسن رحمه الله تعالى قال الشيخ الإمام شمس الأئمة السرخسي رحمه الله تعالى رواية الحسن أقرب إلى الإحتياط إذ ليس كل ولي يحسن المرافعة إلى القاضي ولا كل قاض يعدل فكان الأحوط سد باب التزويج عليها من غير كفء۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 648 May 23, 2021
bewah ka eddat kay baad doosra nikkah karne or walidain or rishtay daaron ka us say nikkah rooknay ka hukum, The order / ruling for the widow to remarry after Idda and ruling on parents and relatives to stop her from this marriage

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.