عنوان: کسی کے لیے معیاری سامان مناسب قیمت پر خرید کر دینے پر بغیر بتائے کمیشن لینے کا حکم(108152-No)

سوال: مفتی صاحب ! ایک شخص آفس میں ایڈمن ہے، اس کو اپنے کام کے علاوہ آفس کا فرنیچر لانے کا کہا جائے، وہ کسی اور کو کہنے کے بجائے معیاری اور رقم کے فرق کی وجہ سے خود وہ کام انجام دے، تو کیا بہترین معیار اور مناسب قیمت پر فرنیچر لانے کے لیے خود کمیشن رکھ سکتا ہے یا بعینہ وہی رقم دفتر سے لے گا، جتنے میں فرنیچر آیا ہے؟ برائے مہربانی رہنمائی فرمادیں۔

جواب: واضح رہے کہ جو شخص کمیشن ایجنٹ نہ ہو، یا وہ کمیشن لے کر کام کرنے کے حوالے سے مشہور نہ ہو، تو اس کے لیے کسی بھی جائز سامان کی بطور وکیل خریداری کرنے پر بغیر بتائے کمیشن لینا جائز نہیں ہے، لہذا صورت مسئولہ میں مناسب قیمت پر معیاری فرنیچر خرید کر دینا محض ایک احسان اور تبرع ہے، اس پر بغیر بتائے کمیشن لینا جائز نہیں ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


الشامیۃ:(10/6،ط:دارالفکر)
"(و) اعلم أن (الأجر لا يلزم بالعقد فلا يجب تسليمه) به (بل بتعجيله أو شرطه في الإجارة) المنجزة۔۔الخ".

وفیہ ایضاً:(47/6،ط:دارالفکر)
"قال في البزازية: إجارة السمسار والمنادي والحمامي والصكاك وما لا يقدر فيه الوقت ولا العمل تجوز لما كان للناس به حاجة ويطيب الأجر المأخوذ".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 168
kisi kay liye may'yaari saaman munasib qeemat par khareed kar dene par bagair bataye commission par lene ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.