عنوان: مسجد میں نمازی کے آگے سے کتنی صفوں کے فاصلے سے گزرا جاسکتا ہے؟(108351-No)

سوال: مفتی صاحب ! مسجد میں کتنی صف کی دوری سے نمازی کے آگے سے گذر سکتے ہیں؟

جواب: مسجد اگر چھوٹی ہو تو نمازی کے آگے سے بغیر سترہ کے نہیں گزر سکتے، لیکن اگر مسجد بڑی ہو یا نمازی کسی کھلے میدان میں نماز پڑھ رہا ہو اور اس کے سامنے کوئی سترہ یا آڑ نہ ہو، تو اس صورت میں جس صف میں نمازی نماز پڑھ رہا ہے، اس کے علاوہ مزید دو صف آگے سے گزرنے کی گنجائش ہے۔

بڑی مسجد سے مراد وہ مسجد ہے، جو چالیس گز (شرعی) لمبی اور چالیس گز چوڑی یا انگریزی ساٹھ فٹ لمبی اور ساٹھ فٹ چوڑی ہو یا اس سے بڑی ہو، اور جو اس سے کم ہوگی، وہ چھوٹی مسجد کہلائے گی۔


دلائل:

البحرالرائق:(16/2،ط:دارالکتاب الاسلامی)
وذكر التمرتاشي أن الأصح أنه إن كان بحال لو صلى صلاة خاشع لا يقع بصره على المار فلا يكره المرور نحو أن يكون منتهى بصره في قيامه إلى موضع سجوده۔

فتح القدیر:(405/1،ط:دارالفکر)
(قوله وإنما يأثم إذا مر في موضع سجوده على ما قيل ولا يكون بينهما حائل) قيل هذا هو الأصح لأن من قدمه إلى موضع سجوده هو موضع صلاته،۔۔۔۔۔۔۔ومنهم بمقدار صفين أو ثلاثة، وفي النهاية الأصح أنه إن كان بحال لو صلى صلاة الخاشعين نحو أن يكون بصره في قيامه في موضع سجوده وفي موضع قدميه في ركوعه وإلى أرنبة أنفه في سجوده وفي حجره في قعوده وإلى منكبه في سلامه لا يقع بصره على المار لا يكره.

حاشية الطحطاوي على مراقي الفلاح:(342/1،ط:دارالكتب العلمية،بيروت)
والمکروہ المرور بمحل السجود علی الأصح في المسجد الکبیر والصحراء والصغیر مطلقاً۔ وفي الطحطاوي: ہو أن یکون أربعین فأکثر، وقیل: ستین فأکثر، والصغیر بعکسہ۔

کذا فی فتاویٰ بنوری تاؤن:رقم الفتوی:144204201069

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 203
masjid me / may namazi ke / kay age / aage se / say kitni safo / saffo ke / kay fasle / faasle se / say guzra jasakta he?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.