عنوان: "قرآن کریم کا میت کے سرہانے خوبصورت آدمی کی شکل میں آنے" سے متعلق حدیث کی تحقیق (108605-No)

سوال: مفتی صاحب ! مندرجہ ذیل حدیث کا حکم بیان فرمادیں: تم میں سے جب کوئی شخص رات كو بيدار ہو، تو بلند آواز سے قرأت کرے، کیونکہ وہ اپنى تلاوت سے سرکش شیاطین اور فاسق جنات بھگا رہا ہوتا ہے، فضا اور گھر میں رہنے والے فرشتے اس کی نماز کے ساتھ نماز پڑھتے اور اس کی قرأت کو غور سے سنتے ہیں اور گزرنے والى رات آئندہ آنے والى رات کو یہ کہتے ہوئے وصیت کر کے جاتى ہے کہ تو بھى اس (قرآن پڑھنے والے) کو رات کى اسى گھڑى میں بیدار کرنا اور اس پر ہلکى رہنا، چنانچہ جب اس کی وفات کا وقت ہوتا ہے، تو قرآن کریم آتا ہے اور جب تک اس کے گھر والے اسےغسل دے رہے ہوتے ہیں، قرآن کریم اس شخص کے سرہانے کھڑا رہتا ہے، جیسے ہی گھر والے اس کے غسل وکفن سے فارغ ہوتے ہیں، تو قرآن کریم آتا ہے اور اس شخص کےکفن اور سینے كے درمیان جاگزیں ہوجاتا ہے، پھرجب اسے دفن کیا جاتا ہے اور منکر نکیر (دو خاص فرشتوں کے نام) اس کے پاس آتے ہیں، تو قرآن کریم نکل کر میت اور ان فرشتوں کے درمیان حائل ہوجاتا ہے، وہ فرشتے قرآن كريم سے کہتے ہیں: ہمارے سامنے سے ہٹ جاؤ، تاکہ ہم اس سے سوال و جواب کر سکیں، تو قرآن کریم جواب میں کہتا ہے:نہیں ! بخدا میں اس سے اس وقت تک نہیں ہٹوں گا، جب تک ميں اسے جنت میں نہ داخل کرادوں اور اگر تمہیں اس شخص کے بارے میں اللہ تعالى کى طرف سے کوئی حکم دیا گیا ہے، تو تم اس حکم کو پورا کر گزرو، پھر قرآن كريم اس میت کی طرف دیکھ کر کہتا ہے : کیا تم مجھے پہچانتے ہو؟ تو وہ کہتا ہے: نہیں، تب وہ قرآن اس سے کہتا ہے: میں وہى قرآن تو ہوں، جو تجھے رات كو جگائے رکھتا تھا(تہجد میں بیدار ہو کر تم میرى تلاوت کیا کرتے تھے) اور تمہیں دن بھر پیاسا رکھتا تھا اور تجھے تیرى شہوت سے روکے رکھتا تھا اور تیرے کانوں اور تیری آنکھوں کو (غلط کاموں سے) روکتا تھا، سو تو مجھے دوستوں میں سچا دوست اور بھائیوں میں سچا بھائی پائے گا، تجھے خوشخبرى ہو کہ منکر نکیر کے سوال و جواب کے بعد تمہیں کوئى غم اور پریشانى نہیں ہوگى، پھر قرآن کریم اوپر اللہ تعالی كى طرف جائے گا اور اللہ تعالى سے اس کے لیے بستر اور چادر مانگے گا، تو الله تعالى اس کے لیے بستر، چادر، جنت کے نور کا ايک چراغ اور جنت کی یاسمین (چنبیلی) عنايت كيے جانے کا فرشتوں كو حكم فرمائیں گے، چنانچہ حکم کى تعمیل میں ایک ہزار آسمانی مقرب فرشتے ان چیزوں کو اٹھا کر لائیں گے، ایسے میں قرآن کریم ان فرشتوں سے پہلے اس ميت كے پاس پہنچ جائے گا اور اس سے کہے گا: تجھے میرے یہاں سے جانے کے بعد كوئى گھبراہٹ تو نہیں ہوئی؟(میں یہاں سے جانے کے بعد) مسلسل اللہ تعالى سے تیرے بارے میں سفارش کرتا رہا، یہاں تک کہ اللہ تعالی نے تیرے لیے بستر، چادر اور جنت کے نور کا چراغ اور جنت کی یاسمین (چنبیلی) عنايت كيے جانے کا حکم دے دیا، پھر فرشتے اس ميت کو اوپر اٹھاتے ہیں اور اس كے لیے بستر بچھاتے ہیں اور اوڑھنى( چادر) میت کی پاؤں کی جانب رکھ دیتے ہیں اور یاسمین (چنبیلی) اس کے سینے کے پاس رکھ دیتے ہیں، پھر اس ميت کو دائیں کروٹ پر لٹاتے ہیں اور وہ فرشتے اس کے پاس چلے جاتے ہیں، یہ مردہ ان فرشتوں کو جاتا ہوا برابر دیکھتا رہتا ہے، یہاں تک کہ وہ آسمان میں گم ہو جاتے ہیں، پھر قرآن کریم میت کے لیے اوپر جاتا ہے، تو قبر کے قبلے کى جانب کو پانچ سو سال کی مسافت کے برابر کشادہ کردیا جاتا ہے یا جتنا اللہ تعالى کشادہ فرمانا چاہیں، اتنى کشادہ کر دى جاتى ہے، پھرقرآن کریم اس یاسمین ( چنبیلی) كو اٹھا کر اس میت کے ناک کے نتھنوں کے پاس رکھ دیتا ہے، (تاکہ مسلسل وہ یاسمین کى خوشبو سے محظوظ ہوتا رہے)، پھر وہ قرآن کریم اس میت کے گھر والوں کے پاس ہر روز ایک یا دو دفعہ جاتا ہے اور ان کی خیر خبر اس میت کے پاس لاتا ہے اور اس کے گھر والوں کے لیے بھلائی کی دعا کرتا رہتا ہے، اگر اس میت کى اولاد میں کوئى قرآن کریم سیکھ ليتا ہے، تو قرآن كريم آكر اس ميت كو اس بات کی خوشخبری سناتا ہے اور اگر اس میت کے پسماندگان برے ہوں، تب بھى روزانہ ایک یا دو مرتبہ قرآن کریم، ان کے پاس آکر ان کے حال پر کڑھتا اور روتا رہتا ہے اور یہ سلسلہ قیامت کے صور پھونکے جانے تک جارى رہتا ہے۔

جواب: سوال میں ذکرکردہ روایت کو علامہ ابن ابی الدنیا نے كتاب التهجد (38/2،الرقم:3۰،ط: دار أطلس الخضراء) میں ذکر کیا ہے، ذیل میں مکمل روایت سند، متن، ترجمہ اور حکم کے ساتھ ذکر کی جاتی ہے:

حدثني محمد بن الحسين، حدثنا أبو عبد الرحمن المقرئ، حدثنا داود, أبو بحر، عن صهر, يقال له: مسلم بن مسلم، عن مورق العجلي، عن عبيد بن عمير، عن عبادة بن الصامت، قال: إذا قام أحدكم من الليل, فليجهر بقراءته, فإنه يطرد بجهر قراءته مردة الشياطين، وفتاني الجن، وإن الملائكة الذين هم في الهواء, وسكان الدار يستمعون إلى قراءته، ويصلون بصلاته، فإذا مضت عنه الليلة, أوصت به الليلة المستأنفة فتقول: نبهيه لساعته، وكوني عليه خفيفة, فإذا حضرته الوفاة جاء القرآن, فوقف عند رأسه وهم يغسلونه, فإذا فرغوا منه, دخل القرآن حتى صار بين صدره وكفنه, فإذا وضع في حفرته وجاء منكر ونكير, خرج القرآن حتى صار بينه وبينهما, فيقولان: إليك عنا, فإنا نريد أن نسأله, فيقول: ما أنا بمفارقه.
قال أبو عبد الرحمن: وكان في كتاب معاوية بن حماد: إلي حتى أدخله الجنة، فإن كنتما أمرتما فيه بشيء فشأنكما، ثم ينظر, فيقول: هل تعرفني؟ فيقول: لا، فيقول: أنا القرآن الذي كنت أسهر ليلك, وأظمئ نهارك، وأمنعك شهوتك, وسمعك, وبصرك، فستجدني اليوم من الأخلاء خليل صدق، ومن الإخوان أخا صدق, فأبشر فما عليك بعد مسألة منكر ونكير من هم، ولا حزن, ثم يخرجان من عنده, فيصعد القرآن إلى ربه, فيسأله له دثارا, وفراشا, ونورا من الجنة، فيؤمر له بقنديل وفراش من نور الجنة، وياسمين من ياسمين الجنة، فيحمله ألف ملك من مقربي سماء الدنيا، فيسبقهم القرآن إليه، فيقول: هل استوحشت بعدي؟ فإني لم أزل بربك حتى أمر لك بفراش ودثار, ونور من نور الجنة، فيدخل عليه الملائكة, فيحملونه ويفرشون له ذلك الفراش, ويضعون الدثار تحت رجليه, والياسمين عند صدره، ثم يحملونه حتى يضعوه على شقه الأيمن، ثم يصعدون عنه, فيستلقي عليه, فلا يزال ينظر إليهم حتى يلجوا في السماء، ثم يدفع القرآن في قبلة القبر, فيتسع عليه ما شاء الله.
قال أبو عبد الرحمن: وكان في كتاب معاوية: فيتسع عليه مسيرة أربعمئة عام، ثم يحمل الياسمين من عند صدره, فيضعه عند أنفه, فيشمه غضا كما جيء به, إلى أن ينفخ في الصور، ثم يأتي أهله كل يوم مرة, أو مرتين فيأتيه بخبرهم, فيدعو لهم بالخير والإقبال، فإن تعلم أحد من ولده القرآن بشره بذلك، وإن كان عقبه عقب سوء أتى الدار غدوة وعشية، فبكى عليه حتى ينفخ في الصور, أو كما قال
.

ترجمہ: تم میں سے جب کوئی شخص رات كو بيدار ہو، تو بلند آواز سے قرأت کرے، کیونکہ وہ اپنى تلاوت سے سرکش شیاطین اور فاسق جنات بھگا رہا ہوتا ہے، فضا اور گھر میں رہنے والے فرشتے اس کی نماز کے ساتھ نماز پڑھتے اور اس کی قرأت کو غور سے سنتے ہیں اور گزرنے والى رات آئندہ آنے والى رات کو یہ کہتے ہوئے وصیت کر کے جاتى ہے کہ تو بھى اس (قرآن پڑھنے والے) کو رات کى اسى گھڑى میں بیدار کرنا اور اس پر ہلکى رہنا، چنانچہ جب اس کی وفات کا وقت ہوتا ہے، تو قرآن کریم آتا ہے اور جب تک اس کے گھر والے اسےغسل دے رہے ہوتے ہیں، قرآن کریم اس شخص کے سرہانے کھڑا رہتا ہے، جیسے ہی گھر والے اس کے غسل وکفن سے فارغ ہوتے ہیں، تو قرآن کریم آتا ہے اور اس شخص کےکفن اور سینے كے درمیان جاگزیں ہوجاتا ہے، پھرجب اسے دفن کیا جاتا ہے اور منکر نکیر (دو خاص فرشتوں کے نام) اس کے پاس آتے ہیں، تو قرآن کریم نکل کر میت اور ان فرشتوں کے درمیان حائل ہوجاتا ہے، وہ فرشتے قرآن كريم سے کہتے ہیں: ہمارے سامنے سے ہٹ جاؤ، تاکہ ہم اس سے سوال و جواب کر سکیں، تو قرآن کریم جواب میں کہتا ہے:نہیں ! بخدا میں اس سے اس وقت تک نہیں ہٹوں گا، جب تک ميں اسے جنت میں نہ داخل کرادوں اور اگر تمہیں اس شخص کے بارے میں اللہ تعالى کى طرف سے کوئی حکم دیا گیا ہے، تو تم اس حکم کو پورا کر گزرو، پھر قرآن كريم اس میت کی طرف دیکھ کر کہتا ہے : کیا تم مجھے پہچانتے ہو؟ تو وہ کہتا ہے: نہیں، تب وہ قرآن اس سے کہتا ہے: میں وہى قرآن تو ہوں، جو تجھے رات كو جگائے رکھتا تھا(تہجد میں بیدار ہو کر تم میرى تلاوت کیا کرتے تھے) اور تمہیں دن بھر پیاسا رکھتا تھا اور تجھے تیرى شہوت سے روکے رکھتا تھا اور تیرے کانوں اور تیری آنکھوں کو (غلط کاموں سے) روکتا تھا، سو تو مجھے دوستوں میں سچا دوست اور بھائیوں میں سچا بھائی پائے گا، تجھے خوشخبرى ہو کہ منکر نکیر کے سوال و جواب کے بعد تمہیں کوئى غم اور پریشانى نہیں ہوگى، پھر قرآن کریم اوپر اللہ تعالی كى طرف جائے گا اور اللہ تعالى سے اس کے لیے بستر اور چادر مانگے گا، تو الله تعالى اس کے لیے بستر، چادر، جنت کے نور کا ايک چراغ اور جنت کی یاسمین (چنبیلی) عنايت كيے جانے کا فرشتوں كو حكم فرمائیں گے، چنانچہ حکم کى تعمیل میں ایک ہزار آسمانی مقرب فرشتے ان چیزوں کو اٹھا کر لائیں گے، ایسے میں قرآن کریم ان فرشتوں سے پہلے اس ميت كے پاس پہنچ جائے گا اور اس سے کہے گا: تجھے میرے یہاں سے جانے کے بعد كوئى گھبراہٹ تو نہیں ہوئی؟(میں یہاں سے جانے کے بعد) مسلسل اللہ تعالى سے تیرے بارے میں سفارش کرتا رہا، یہاں تک کہ اللہ تعالی نے تیرے لیے بستر، چادر اور جنت کے نور کا چراغ اور جنت کی یاسمین (چنبیلی) عنايت كيے جانے کا حکم دے دیا، پھر فرشتے اس ميت کو اوپر اٹھاتے ہیں اور اس كے لیے بستر بچھاتے ہیں اور اوڑھنى( چادر) میت کی پاؤں کی جانب رکھ دیتے ہیں اور یاسمین (چنبیلی) اس کے سینے کے پاس رکھ دیتے ہیں، پھر اس ميت کو دائیں کروٹ پر لٹاتے ہیں اور وہ فرشتے اس کے پاس چلے جاتے ہیں، یہ مردہ ان فرشتوں کو جاتا ہوا برابر دیکھتا رہتا ہے، یہاں تک کہ وہ آسمان میں گم ہو جاتے ہیں، پھر قرآن کریم میت کے لیے اوپر جاتا ہے، تو قبر کے قبلے کى جانب کو پانچ سو سال کی مسافت کے برابر کشادہ کردیا جاتا ہے یا جتنا اللہ تعالى کشادہ فرمانا چاہیں، اتنى کشادہ کر دى جاتى ہے، پھرقرآن کریم اس یاسمین ( چنبیلی) كو اٹھا کر اس میت کے ناک کے نتھنوں کے پاس رکھ دیتا ہے، (تاکہ مسلسل وہ یاسمین کى خوشبو سے محظوظ ہوتا رہے)، پھر وہ قرآن کریم اس میت کے گھر والوں کے پاس ہر روز ایک یا دو دفعہ جاتا ہے اور ان کی خیر خبر اس میت کے پاس لاتا ہے اور اس کے گھر والوں کے لیے بھلائی کی دعا کرتا رہتا ہے، اگر اس میت کى اولاد میں کوئى قرآن کریم سیکھ ليتا ہے، تو قرآن كريم آكر اس ميت كو اس بات کی خوشخبری سناتا ہے اور اگر اس میت کے پسماندگان برے ہوں، تب بھى روزانہ ایک یا دو مرتبہ قرآن کریم، ان کے پاس آکر ان کے حال پر کڑھتا اور روتا رہتا ہے اور یہ سلسلہ قیامت کے صور پھونکے جانے تک جارى رہتا ہے۔

حکم:
علامہ ابن جوزی نے اس حدیث کے بارے میں امام عقیلی ؒ کا کلام نقل کرنے کے بعد فرمایا:اس حدیث کی نسبت جناب رسول اللہ ﷺ کی طرف کرنا صحیح نہیں ہے، اس میں روای’’داؤد بن راشدالطفاوي‘‘ متہم ہےاور ایک روای ’’الکدیمی‘‘وضّاع یعنی روایات گھڑنے والاہے، لیکن علامہ سیوطی ؒ نے ’’ اللآلىء المصنوعة ‘‘میں علامہ ابن جوزی ؒ پر رد کرتے ہوئے فرمایا: ’’الکدیمی" حديث گھڑنے کے الزام سے برى ہے اور اس روایت کو مسند حارث، کتاب التہجد لأبن أبی الدنیا، فضائل القرآن لأبن الضریس اور کتاب الصلوۃ لأبن نصر میں ’’الکدیمی‘‘کے طریق کے علاوہ ’’داؤد بن راشدالطفاوي‘‘ سے نقل کیا گیا ہے۔

علامہ ابن عراق الكنانیؒ نے فرمایا: روای’’داؤد بن راشدالطفاوي‘‘ سے امام أبوداؤد اور امام نسائی نے حدیث نقل کی ہے اور ابن حبان نے انہیں ’’ثقہ‘‘ قرار دیا ہے اور حافظ ابن حجرؒ نے انہیں اس طبقے میں شمار کیا ہے، جن کے بارے میں کوئی ایسی قابلِ گرفت بات ثابت نہیں ہے، جس کی وجہ سے ان کی روایت کو ترک کیاجائے۔

خلاصہ کلام:
مذکورہ بالاروایت اگرچہ ضعیف ہے اور اس کی سند پر کلام کیا گیا ہے، لیکن حضرت معاذ بن جبل سے مروی روایت اس حدیث کے بطور شاہد موجود ہے، جس کی وجہ سے اس روایت کو تقویت مل جاتی ہے اور اس کا ضعف کم ہوجاتا ہے، لہذا اس روایت کو بیان کرنا درست ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تخریج الحدیث:
أخرجہ الحارث فی مسندہ کما فی قال الھیثمی فی بغية الباحث عن زوائد مسند الحارث (736/2،الرقم:730،ط: مركز خدمة السنة) وأبي بكر بن أبي الدنيا في كتاب التهجد(38/2،الرقم:3۰،ط: دار أطلس الخضراء) و ابن نصرالمَرْوَزِي فی قیام اللیل (141،ط:حديث أكادمي)
وا بن الضريس فی فضائل القرآن(65،الرقم:115،ط:دارالفکر)و العقیلی فی الضعفاء(13/2،الرقم:468،ط: دار التأصيل)

الحکم علی الحدیث:
الموضوعات لأبن الجوزی:(252/1،ط:المكتبة السلفية)

وقد رواه العقيلي عن إبراهيم بن محمد عن عمرو بن مرزوق عن داود أبسط من هذا.
هذا حديث لا يصح عن رسول الله صلى الله عليه وسلم، والمتهم به داود.
قال يحيى بن معين: داود الطفاري [الطفاوي] الذي روى عنه حديث القرآن ليس بشئ.
وقال العقيلي: حديث داود باطل لا أصل له، ثم فيه الكديمى، وكان وضاعا للحديث.

اللآلىءالمصنوعةلعلامۃالسیوطی:(220/1،ط:دارالكتب العلمية)
(قلت) الكديمي منه بريء فقد أخرجه الحارث في مسنده، حدثنا أبو عبد الرحمن المقري حدثنا داود، وأخرجه ابن أبي الدنيا في كتاب التهجد.
حدثنا محمد بن الحسن حدثنا أبو عبد الرحمن المقري عبد الله بن يزيد حدثنا داود أبو بحر عن صهر له يقال له سلم بن مسلم عن مورق العجلي عن عبيد بن عمير عن عبادة به، وأخرجه ابن الضريس في فضائل القرآن أنبأنا عمرو بن مرزوق أنبأنا داود أبو بحر الكرماني به وأخرجه محمد بن نصر في كتاب الصلاة حدثنا محمد بن يحيى حدثنا عبد الله بن يزيد حدثنا داود بن راشد الكرماني به، وأخرجه العقيلي قال حدثنا محمد بن إسماعيل حدثنا المقري (ح) وحدثنا إبراهيم بن محمد حدثنا عمرو بن مرزوق قالا حدثنا داود أبو بحر الطغاوي عن مسلم بن أبي مسلم عن مورق العجلي عن عبيد بن عمير الليثي أنه سمع عبادة بن الصامت فذكره.
وله شاهد من حديث معاذ بن جبل. قال البزار في مسنده حدثنا سلمة بن شبيب حدثنا بسطام بن خالد الحراني حدثنا نصر بن عبد الله أبو الفتح عن ثور بن يزيد عن خالد بن معدان عن معاذ بن جبل قال قال رسول الله من صلى منكم من الليل فليجهر بقراءته فإن الملائكة تصلى بصلاته وتستمع لقراءته وإن مؤمني الجن الذين يكونون في الهواء وجيرانه معه في مسكنه يصلون بصلاته ويستمعون لقراءته وإنه ليطرد بجهره بقراءته عن داره وعن الدور التي حوله فساق الجن ومردة الشياطين وإن البيت الذي يقرأ فيه القرآن عليه خيمة من نور يقتدي بها أهل السماء كما يقتدى بالكوكب الدري في لجج البحار وفي الأرض القفراء فإذا مات صاحب القرآن رفعت تلك الخيمة فينظر الملائكة من السماء فلا يرون ذلك النور فتلقاه الملائكة من سماء إلى سماء فتصلي الملائكة على روحه في الأرواح ثم تستقبل الملائكة الحافظين الذين كانوا معه ثم تستغفر له الملائكة إلى يوم يبعثون وما من رجل تعلم كتاب الله ثم صلى ساعة من ليل إلا أوصت به تلك الليلة الماضية الليلة القابلة المستأنفة أن تنبهه لساعته وأن تكون عليه خفيفة وإذا مات وكان أهله في جهازه جاء القرآن في صورة حسنة جميلة فوقف عند رأسه حتى يدرج في أكفانه فيكون القرآن على صدره دون الكفن.۔۔۔الخ

تنزيه الشريعةالمرفوعةلابن عراق الكناني:(292/1،ط:دارالکتب العلمیۃ)
(قلت) وداود أخرج له أبو داود والنسائي، ووثقه ابن حبان وأدخله الحافظ بن حجر في التقريب في طبقة من لم يثبت فيه ما يترك حديث لأجله والله أعلم، وله شاهد من حديث معاذ بن جبل وفيه انقطاع، قال البزار خالد لم يسمع من معاذ.
وسكت عليه البوصيري كما في الإتحاف (331/6،الرقم:5956) وذکرہ العلامۃ ابن حجر العسقلاني فی المطالب العَاليَة(402/14،الرقم:3500) لم یتکلم علیہ.

شاھد الحدیث:
وللحديث شاهد من حديث معاذ رضي الله عنه مرفوع.
أخرجه البزّار كما في كشف الأستار (341/1،الرقم:712،ط: مؤسسة الرسالة ) حدثنا سلمة بن شبيب، ثنا بسطام بن خالد الحراني، ثنا نصر بن عبد الله أبو الفتح، عن ثور بن يزيد، عن خالد بن معدان، عن معاذ بن جبل، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: " من صلى منكم من الليل فليجهر بقراءته۔۔۔الخ بنحوہ
قال البزار: خالد بن معدان لم يسمع من معاذ، وإنما ذكرناه لأنا لا نحفظه عن النبي صلى الله عليه وسلم إلا من هذا الوجه۔

وذکرہ المنذری بصیغۃ ’’التمریض ‘‘ فی الترغیب والترہیب(243/1،الرقم:923،ط: دارالکتب العلمیۃ) وقال الھیثمی فی مجمع الزوائد (254/2،الرقم:3531،ط: مكتبة القدسي) قلت: وفيه من لم أجد من ترجمه. وقال ابن حجرالعسقلانی:فی ’’نتائج الافکار‘‘(20/2) قلت: وفيه مع انقطاعه نصر بن عبد الله ما عرفته، وبقية رجاله ثقات.
ووجدت له شاهداً من حديث عبادة بن الصامت أخرجه محمد بن نصر المروزي في كتاب ((قيام الليل)) لكنه موقوف على عبادة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 209
quran kareem ka mayyat ke / key sirhane khubsurat aadmi ki shakal me / mein aane se / sey mutalliq hadees ki tehqeeq

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Interpretation and research of Ahadees

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.