عنوان: اگر صحابہ کرام رضى اللہ عنہم اجمعین ستاروں کى مانند ہیں، تو ان پر سزائیں کیوں جارى ہوئیں؟(108857-No)

سوال: مفتی صاحب ! حدیث میں آتا ہے کہ سارے صحابہ ستاروں کے مانند ہیں، تو پھر مختلف صحابہ پر سزائیں کیوں جاری ہوئیں؟ براہ کرم اس کا جواب عنایت فرمادیں۔

جواب: جواب سے پہلے دو باتوں کا بطور تمہید سمجھنا ضروری ہے:

1- واضح رہے کہ جمہورِ اہل السنۃ والجماعۃ کا یہ عقیدہ ہے کہ تمام بنی نوعِ انسان میں انبیاء کرام علیہم السلام کے بعد اگر کوئى سب سے افضل اور برگزیدہ جماعت ہے، تو وہ ہمارے پیارے نبى اکرم صلى اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین كى ہے، یہ وہ خوش قسمت جماعت ہے، جس کی تعلیم وتربیت اور تصفیہ و تزکیہ براهِ راست جنابِ نبىِ كريم صلى الله عليہ وسلم کے ہاتھوں ہوا ہے، آپ صلى اللہ علیہ وسلم کے فیضِ تربیت سے ان میں جو ایمانى کیفیات پیدا ہوئیں، اللہ تعالى نے قرآنِ کریم میں جا بجا ان کا تذکرہ فرما کر اپنى رضا وخوشنودى کا اعلان فرما دیا۔
ارشادِ بارى تعالى ہے، جس کا ترجمہ ہے:
ليكن اللّٰہ نے تمہارے دل میں ایمان کى محبت ڈال دى ہے، اور اسے تمہارے دلوں میں پر کشش بنا دیا ہے، اور تمہارے اندر کفر کى اور گناہوں کى اور نافرمانى کى نفرت بٹھا دى ہے، ايسے ہى لوگ ہیں، جو ٹھیک ٹھیک راستے پر آ چکے ہیں۔
(سورۃالحجرات:آیت نمبر:7)

يہ وہ لوگ ہیں جن کے دلوں میں اللہ نے ایمان نقش کر دیا ہے اور اپنى روح سے ان کى مدد کى ہے۔
(سورۃالمجادلۃ:آیت نمبر:22)

اور مہاجرین اور انصار میں سے جو لوگ پہلے ایمان لائے اور جنہوں نے نیکى کیساتھ ان کى پیروى کى، اللہ ان سب سےراضى ہو گیا ہے اور وہ اس سے راضى ہیں۔
(سورۃالتوبۃ: آیت نمبر:100)

يوں اللہ نے بھلائى کا وعدہ ان سب سے کر رکھا ہے۔
(سورۃالحدید: آیت نمبر:10)

مذكوره بالا آيات سے یہ بات واضح ہوتى ہے کہ صحابہ کرام رضى اللہ عنہم اجمعین پر جنابِ نبیِ کریم صلی الله علیہ وسلم کی تربيت كا یہ اثر تھا کہ شریعت کے تقاضوں پر عمل کرنا، ان کی طبیعت بن چکا تھا، چنانچہ ایمان اور اعمالِ صالحہ کی محبت ان کے دلوں میں رچ بس گئی تھی، کفر، شرک اور فسق و فجور سے حد درجہ کی نفرت ان كى طبيعت كا حصہ بن چکى تھى، اس اعتبار سے یہ حضرات گناہوں سے اگرچہ معصوم نہ تھے، لیکن محفوظ ضرور تھے، محفوظ ہونے کا یہ مطلب نہیں ہے کہ ان سے گناہ صادر ہونے کا امکان ہى ختم ہو گیا تھا، بلکہ امکان تھا، جب ہی تو ان میں سے بعض صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین سے بعض بڑے گناہ بھى سرزد ہوئے ہیں۔

2- ایک دو گمراہ فرقوں کے علاوہ تمام امت محمدیہ کا اجماعی عقیدہ ہے کہ "الصحابۃ کلہم عدول "، (صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین بلاتفریق سب کے سب عادل ہیں ) فقہاء و محدثین نے عدل اور عدالت کا جو مفہوم بیان فرمایا ہے، اس کو عام اصطلاح میں " تقوىٰ "سے تعبیر کیا جاتا ہے، جس کا حاصل یہ ہے کہ عادل اس عاقل بالغ مسلمان کو کہا جاتا ہے، جو کبیرہ گناہوں سے اجتناب کرتا ہو اور صغیرہ گناہوں کا عادى نہ ہو اور ان پر اصرار نہ کرتا ہو، اور جس میں یہ صفات نہ ہوں، وہ "ساقط العدالۃ" اور "فاسق " کہلاتا ہے۔

بظاہر "عدل اور عدالت" کا مذکورہ بالا مفہوم "الصَّحَابَۃُ کُلُّہُمْ عُدُولٌ " کے اجماعی عقیدہ کے منافى ہے، کیونکہ بعض صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین سے گناہ صادر ہوئے ہیں، تو اس اعتبار سے ان کى عدالت کیسے برقرار رہ سکتى ہے؟

جمہور علماء امت نے اس کا جواب یہ دیا ہے کہ اگر کسى سے کبیرہ گناہ سرزد ہو جائے، تو اس کى "عدالت" ساقط ہو جاتى ہے، جب تک وه اس گناہ سے سچی توبہ نہ کر لے، اس وقت تک اس کا فسق باقى رہتا ہے، لیکن توبہ کرنے کے معاملے میں عام افرادِ امت اور صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین میں ایک خاص امتیازى فرق ہے، اگر امت کا کوئی عام فرد گناہ کبیرہ کا مرتکب ہوتا ہے اور وہ توبہ کر لیتا ہے، تو اس کی توبہ کے متعلق یہ ضمانت نہیں ہے کہ آیا اس کی توبہ قبول ہو گئى ہے یا نہیں، یا اس کی نیکیوں کو اس کے گناہوں کا کفارہ بنا دیا گیا ہے یا نہیں، مگر صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کا معاملہ ایسا نہیں تھا، اول تو ان سے گناہ کا صادر ہونا مشکل تھا، لیکن اگر کبھى ان سے کوئى گناہ سرزد ہوا بھى، تو ان کے خوف وخشیت کا یہ عالم تھا کہ وہ بے چین ہو جاتے تھے، وہ اس گناہ سے صرف زبانى توبہ کرنے پر اکتفا نہیں کرتے تھے، بلکہ وہ حضرات اپنے آپ کو بڑی سے بڑی سزا کے لیے پیش کر دیتے تھے، کوئی اپنے آپ کو مسجد کے ستون سے باندھ دیتا تھا، کوئی اپنے آپ کو سنگسار کیے جانے کے لیے آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کی خدمت اقدس میں بار بار آکر درخواست کرتا تھا کہ مجھے اس گناہ سے پاک فرما دیں، اس گناہ کی جو بھی سزا ہو، میں اس کے لیے تیار ہوں، پھر جب تک ان کو اپنی توبہ قبول ہونے کا اطمینان نہ ہو جاتا، انہیں صبر نہ آتا تھا، بعض صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین تو ایسے تھے کہ جن کی توبہ قبول ہونے کے لیے وحی نازل ہوئی اور ان کی توبہ کی قبولیت کا اللہ تعالیٰ نے اعلان فرما کر قیامت تک کے لیے قرآن کریم میں محفوظ فرما دیا، رجم کى سزا کے لیے حضرت ماعز اسلمى رضی اللہ عنہ اور امرأۃ غامدیہ رضی اللّٰہ عنہا کا بار بار آنحضرت صلى اللہ علیہ وسلم کى خدمت میں جاکر اپنے گناہ کا اعتراف کرنا اور پھر سزا جاری ہونا، اس بات کو واضح کرتا ہے کہ ان سے بتقاضۂ بشری اگرچہ گناہ صادر ہوئے تھے، لیکن انہوں نے اس کى تلافى کے لیے جو توبہ کی، جس کی نظیر ملنی مشکل ہے، وہ توبہ نہ صرف ان کے لیےکافی تھی، بلکہ ان کے علاوہ لوگوں پر اگر وہ توبہ تقسیم کی جاتی، تو ان کے لیے بھی کافی تھی، پھر آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے ان کو جنت کی بشارت بھی سنائی، اس اعتبار سے صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے گناہ کا صادر ہونا اور امت کے کسی فرد سے گناہ کا صادر ہونا، دونوں کی توبہ اور قبولیتِ توبہ میں واضح فرق ہے، لہذا صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کے گناہ کو عام افراد ِامت کے گناہ کی طرح قرار دے کر، صحابہ کرام کی شان و مرتبہ میں تنقیص کرنا سراسر نا انصافی ہے۔

غرض یہ کہ بحیثیت مجموعى اگر صحابہ کرام کے حالات کے مطالعہ کا جائزہ لیا جائے ، تو معلوم ہوتا ہے کہ اول تو ان سے بڑے گناہوں کا صدور مشکل تھا اور وہ گناہ جن کے نتیجے میں سزا جارى ہونے کے واقعات احادیث میں بیان ہوئے ہیں، گنتى کے چند ایک واقعات ہیں، اس پر بھى ان کى توبہ کى قبولیت كا پروانہ انہیں ان کى زندگى ہى میں مل چکا تھا، لہذا وہ اس گناہ سے پاک صاف ہوچکے تھے، مزید یہ کہ اللہ تعالى عالم الغیب ہیں، ان کے علم ازلى میں یہ بات تھى کہ بعض صحابہ کرام سے گناہ سرزد ہوں گے، اس کے باوجود قرآنِ کریم میں اللہ تعالى کا تمام صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کو اپنى رضائے کاملہ سےنوازنا، صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کے "عادل" ہونے کی اس سے بڑھ کر کیا دلیل ہوسکتى ہے، لہذا"الصحابۃ کلہم عدول " کا عقیدہ درست ہے، گناہ سے ان کى عدالت ساقط نہیں ہوئى۔

صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین پر سزا جارى ہونے کے واقعات کى عمدہ توجیہ:

صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کے فضائل ومناقب اپنى جگہ مسلَّم ہیں، لیکن پھر بھى ایک عام امتى کو اس پر تعجب ہوتا ہے کہ اگرچہ صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین معصوم نہیں تھے، مان لیا ان سے گناہوں کے صادر ہونے کا امکان تھا، لیکن اتنے بڑے گناہ صادر ہونے کى توقع نہیں کى جا سکتى کہ جس کے نتیجے میں ان پر شرعى سزائیں جارى ہوئیں، ان گناہوں کے ارتکاب کى تو ایک عام مسلمان سے توقع نہیں کى جا سکتى ہے، چہ جائیکہ وہ گناہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین جیسى برگزیدہ اور پاکیزہ ہستیوں سے صادر ہوں؟
اس اشکال کا جو جواب شیخ الحدیث حضرت مولانا محمد زکریا کاندھلوى نور اللہ مرقدہ نے اپنى کتاب "شریعت وطریقت کا تلازم" میں بیان فرمایا ہے، اس سے دل کو اطمینان کى کیفیت حاصل ہوتى ہے، حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کے جواب کا خلاصہ یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے حضورِ اقدس صلی اللّٰہ علیہ وسلم کی ذات اور ان کے طرز ِعمل کو، ہمارے لیے دین پر عمل کرنے کا نمونہ قرار دیا ہے، جب آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ہمارے لیے نمونہ ٹھہرے، تو آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے شریعت کے احکامات پر خود عمل کر کے دکھلایا، اس سلسلے میں شریعت کے احکامات کو عملی جامہ پہنانے کے لیے اللہ تعالٰی نے آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم سے وہ تمام کام کروائے، جو آپ کی شانِ نبوت کے منافی نہ تھے، مثلاً: ایک موقع پر آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم سے فجر کی نماز قضا ہو گئی، جس سے قضا نماز کا حکم معلوم ہوا، اسی طرح نماز میں آپ سے بھول ہو جانا، جس کے نتیجے میں سجدہ سہو کے احکامات کی تعلیم دی گئی اور آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: "میں خود نہیں بھولتا ہوں، بلکہ مجھے تو بھلوایا جاتا ہے، تاکہ میں اس بھولنے کے موقع پر جو شریعت کا حکم ہو، اس کا طریقہ بتلاؤں۔
لیکن شریعت کے بعض احکام ایسے تھے، جن پر عمل کرانا آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کی شان کو زیبا نہیں تھا، لیکن امت کو ان احکامات کی تعلیم دینا شریعت کی تکمیل کے لیے ضروری بھی تھا، مثلاً: شرعی سزائیں جن پر اگر آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کے زمانے میں عمل نہ ہوتا، تو بعد کے زمانے میں لوگ ان سزاؤں کے جاری کرنے میں پس وپیش سے کام لے سکتے تھے، چنانچہ ان سزاؤں کے جاری کرنے کے لیے من جانب اللہ تکوینی طور پر بعض صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے بڑے بڑے گناہ صادر کروائے گئے، تاکہ احکام شریعت کی تکمیل ہو، چنانچہ ان صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین نے جو گناہ کیے، وہ دیکھنے میں تو انہیں کا فعل تھا، لیکن جس طرح رضاکارانہ طور پر انہوں نے اپنے آپ کو سزا جاری کیے جانے کے لیے پیش کیا، اس سے ایسا معلوم ہوتا ہے کہ ان سے یہ گناہ تکوینی طور پر کروائے گئے، جس کے نتیجے میں وہ اپنے آپ کو سنگسار ہونے کے لیے، ہاتھ کٹوانے اور کوڑے لگوانے کے تیار ہو گئے، چنانچہ جہاں ان کی توبہ قبول ہوئی، وہیں شریعت کے احکامات کو عملی جامہ بھی مل گیا، گویا کہ وہ اس آیت کا مصداق بنے "فَاُولٰٓئِکَ یُبَدِّلُ اللّٰہُ سَیِّاٰتِہِمۡ حَسَنٰتٍ ؕ " (اللہ ایسے لوگوں کی برائیوں کو نیکیوں میں تبدیل کردے گا)۔

خلاصہ یہ کہ صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین "معصوم عن الخطاء " نہیں تھے، لیکن گناہوں سے محفوظ تھے، جو گناہ ان سے سرزد ہوئے، اس کے باجود اللہ تعالیٰ کا ان سے راضی ہونے کا اعلان فرمانا، ان کی توبہ کے لیے کافی ہے، نیز انہوں نے ان گناہوں سے ایسی توبہ کی تھی کہ دنیا میں ہی وہ گناہوں سے پاک صاف ہوگئے تھے، اس کے علاوہ صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے گناہ سرزد ہونے کے جو واقعات ہیں، وہ گنتی کے چند ایک واقعات ہیں، جس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ ان سے تکوینی طور پر ایسے افعال صادر کروائے گئے، تاکہ شریعت کے احکامات کو عملی جامہ پہنایا جا سکے، لہذا تمام صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین امت کے لیے آسمانِ ھدایت کے روشن ستاروں کی مانند ہیں، ان میں سے جس کی بھی اقتدا کی جائے گی، اسے اللہ ھدایت یافتہ لوگوں میں شامل فرما دیں گے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

تاريخ المفضل بن غسان الغلابي كما في الفتح لابن رجب: (باب الأذان بعد ذهاب الوقت، 106/5)
حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَامِرٍ، قَالَ: سَمِعْتُ عَبْدَ اللهِ بْنَ الْمُبَارَكِ، قَالَ: قَالَتْ عَائِشَةُ: قَالَ رَسُولُ اللهِ ﷺ: «إِنَّمَا أُنَسَّى أَوْ أَسْهُو لِأَسُنَّ».

الموطأ للإمام مالك: كما في رواية يحيى: (رقم الحدیث: 264، العمل في السهو)
عن مالك أنه بلغه: أَنَّ رَسُولَ اللهِ ﷺ قَالَ: «إِنِّي لَأَنْسَى أَوْ أُنَسَّى لِأَسُنَّ»

صحيح ابن حبان: (407/6)
قال أبو حاتم:...العلة في سهو النبي صلى الله عليه وسلم في صلاته أنه صلى الله عليه وسلم بعث معلما قولا وفعلا، فكانت الحال تطرأ عليه في بعض الأحوال، والقصد فيه إعلام الأمة ما يجب عليهم عند حدوث تلك الحالة بهم بعده صلى الله عليه وسلم»

شرح الشفا: (269/2)
"(نعم) ليس نسيانه كنسيان غيره من كل وجه (بل حالة النسيان والسهو) أي نسيانه وسهوه (هنا) أي في هذا المحل بخصوصه (في حقه عليه الصلاة والسلام سبب إفادة علم) لأمته (وتقرير شرع) لملته (كما قال عليه الصلاة والسلام) في حديث الموطأ بلاغا لم يعرف وصله (إني لأنسى) بفتح الهمزة والسين أي بإنسائه سبحانه كما قال تعالى فلا تنسى إلا ما شاء الله انساءك إياه (أو أنسى) بصيغة المفعول مشددا ويجوز مخففا أي ينسيني الله تعالى (لأسن) يفتح الهمزة وضم السين وتشديد النون أي لأبين لكم ما يفعله أحد منكم نسيانا لتأنسوا بي وتقتدوا بفعلي (بل قد روي لست أنسى) أي حقيقة (ولكن أنسى) بصيغة المجهول كما مر (لأسن) وهذا نظير قوله تعالى وما رميت إذ رميت ولكن الله رمى إيماء إلى مقام الجمع (وهذه الحالة) أي من نسيانه ليسن (زيادة له في التبليغ) أي تبليغ الرسالة (وتمام عليه في النعمة) حيث أمر الأمة بأن يقتدوا به فيما صدر عنه على جهة السهو والغفلة ولعل فيه إيماء إلى قوله تعالى ويتم نعمته عليك".

مستفاد از مقام صحابہ رضی اللّٰہ عنہم، مؤلفہ: مفتی محمد شفیع عثمانی صاحب رحمۃ اللّٰہ علیہ: (ص: 55،57)

مستفاد از شریعت و طریقت کا تلازم، مؤلفہ: شیخ الحدیث حضرت مولانا محمد زکریا کاندھلوی رحمۃ اللّٰہ علیہ: (ص: 9،13)

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 358
agar sahaba karam razi Allahho anho ajmaeen sitaro / stars ki manind he / hain to un per / par sazaen / had / sazaein kio jari hoen?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.