عنوان: اکاونٹس لیکچرز کو یوٹیوب چینل پر اپلوڈ کر کے کمائی کرنا(8885-No)

سوال: مفتی صاحب! میں چاہتا ہوں کہ اپنا چینل بنا کر طلبہ کے لئے اس میں اکاونٹس کے لیکچر ڈالوں، اس میں میری تصویر نہیں آئے گی، کیا میرے لئے اس چینل سے حاصل ہونے والی کمائی جائز ہوگی یا نہیں؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں اگر یوٹیوب چینل پر اپلوڈ کیا جانے والا مواد جائز اور فائدہ مند معلومات پر مشتمل ہو، اور اس پر چلنے والے اشتہارات خواتین کی تصاویر، میوزک اور دوسرے شرعی منکرات پر مشتمل نہ ہوں، تو ایسی ویڈیوز سے حاصل ہونے والی آمدنی کا استعمال جائز ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

فقہ البیوع: (325/1، ط: معارف القرآن)
ولكن معظم استعمال التلفزيون في عصرنا في برامج لاتخلو من محظور شرعي، وعامة المشترين يشترونه لهذه الأغراض المحظورة من مشاهدة الأفلام والبرامج الممنوعة، إن كان هناك من لا يقصد به ذلك. فبما أن غالب استعماله في مباح ممكن فلا نحكم بالكراهة التحريمنية في بيعه مطلقا، إلا إذا تمحض لمحظور، ولكن نظرا إلى أن معظم استعماله لا يخلو من كراهة تنزيهية . وعلى هذا فينبغي أن يتحوط المسلم في اتخاذ تجارته مهنة له في الحالة الراهنة إلا إذا هيأ الله تعالی جوا يتمحض أو يكثر فيه استعماله المباح۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 196
accounts lactures ko youtube chanel per par apload karke kamai karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Business & Financial

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.