عنوان: قرض کی واپسی پر متعین رقم (fix amount) دینے کا حکم(108997-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! سوال یہ ہے کہ کیا کسی شخص سے پیسے لینا اور ان پیسوں سے اپنی ذاتی ضرورت پوری کرنا، جیسا کہ گھر لینا یا گاڑی لینا یا کوئی بھی اپنی ذاتی ضرورت پوری کرنا اور اس رقم کے عوض اس شخص کو ایک ماہانہ fix اماؤنٹ دینا اور اس شخص کے مانگنے پر اس کو پوری اماؤنٹ ایک ساتھ یا آدھی رقم لوٹانا باہمی رضامندی سے صحیح ہے؟

جواب: سوال میں پوچھی گئی صورت میں ماہانہ متعین رقم (fix amount) دینا سود ہے، کیونکہ قرآن و حدیث کی واضح اور قطعی نصوص کی روشنی میں سود کا لین دین حرام ہے٬ لہذا اس سے بچنا ضروری ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (البقرة، الآیة: 279،278)
يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ وَذَرُوا مَا بَقِيَ مِنَ الرِّبَا إِنْ كُنْتُمْ مُؤْمِنِينَ۔ فَإِنْ لَمْ تَفْعَلُوا فَأْذَنُوا بِحَرْبٍ مِنَ اللَّهِ وَرَسُولِهِ ۖ وَإِنْ تُبْتُمْ فَلَكُمْ رُءُوسُ أَمْوَالِكُمْ لَا تَظْلِمُونَ وَلَا تُظْلَمُونَ o

وقولہ تعالی: (البقرۃ، الآیۃ: 275)
أحل اﷲ البیع وحرم الربوا....الخ

صحیح مسلم: (رقم الحدیث: 4092)
عن جابر قال:لعن رسول الله صلى الله عَليه وسلم آكِلَ الرِّبَا، وَمُؤْكِلَهُ، وَكَاتِبَهُ، وَشَاهِدَيْهِ،وقال: هم سواء.

السنن الکبری للبیہقي: (باب کل قرض، رقم الحدیث: 11092، دار الفکر)
عن فضالۃ بن عبید صاحب النبي صلی اﷲ علیہ وسلم أنہ قال: کل قرض جر منفعۃ فہو وجہ من وجوہ الربا.

الدر المختار مع رد المحتار: (کل قرض جر نفعا حرام، 166/5، سعید)
کل قرض جر نفعا حرام.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 195
qarz ki wapse per / par mutayen raqam (fix amount) dene ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Loan, Interest, Gambling & Insurance

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.