عنوان: تین ماہ میں چار حیض آنے کا حکم (9555-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! ایک عورت کو بیس دن میں حیض آتا ہے، حالانکہ حیض تو مہینے میں ایک دفعہ آتا ہے، اس حساب سے تین مہینوں میں چار دفعہ یہ خون آتا ہے، تو کیا اس کو بیماری کہا جاسکتا ہے یا نہیں؟ اور اس پر حیض والے احکام جاری کیے جاسکتے ہیں یا نہیں؟ براہ کرم رہنمائی فرمادیں۔

جواب: طہر یعنی پاکی کی کم سے کم مدت پندرہ دن ہے، اور حیض کی کم سے کم مدت تین دن ہے، لہذا اگر کسی خاتون کو بیس دن بعد خون آتا ہے، تو یہ خون حیض شمار ہوگا، اور اس پر حیض کے احکام جاری ہوں گے۔
واضح رہے کہ تین ماہ میں چار حیض آنا شرعاً ممکن ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھدایة: (60/1، ط: رحمانیة)

اقل الحیض ثلاثة ایام و لیالیھا، و مانقص من ذالک فھو استحاضة، و اکثرہ عشرۃ ایام.....و اقل الطھر خمسة عشر یوماً، و لاغایة لاکثرہ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 122

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Women's Issues

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.