عنوان: کھجور کھلانے سے بھی ولیمہ کی سنت ادا ہو جاتی ہے(973-No)

سوال: مفتی صاحب ! اگر کوئی شخص نکاح کرلے اور رخصتی بھی کرلے، لیکن مال نہ ہونے کی وجہ سے ولیمے میں تاخیر کردے، تو اس کا شریعت میں کیا حکم ہے ؟

جواب: ''ولیمہ'' اس کھانے کو کہا جاتا ہے جو میاں بیوی کے اکٹھا ہونے یعنی شبِ زفاف  کے بعد کھلایا جاتا ہے، شبِ زفاف کے تیسرے دن تک حدیث شریف سے ولیمہ کا ثبوت ہے، اگر شبِ زفاف کے بعد پہلے دن انتظام ہوسکتا ہو، تو سب سے بہتر پہلا دن ہے، تیسرے دن کے بعد ولیمہ کرنا فقط ضیافت شمار ہوگی۔
واضح رہے کہ ولیمہ پیٹ بھر کر کھانا کھلانے پر موقوف نہیں ہے، بلکہ حسبِ استطاعت دودھ یا کھجور وغیرہ ولیمہ کی نیت سے کھلانے سے بھی ولیمہ کی سنت ادا ہوجاتی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سنن ابن ماجۃ: (615/1، ط: دار احیاء الکتب العربیة)
عن أنس بن مالك، أن النبي صلى الله عليه وسلم «أولم على صفية بسويق وتمر»

مرقاۃ المفاتیح: (2110/5، ط: دار الفکر)
(وعن ابن مسعود قال: قال رسول الله - صلى الله عليه وسلم - طعام أول يوم) : أي: في العرس (حق) : أي: ثابت ولازم فعله وإجابته أو واجب، وهذا عند من ذهب إلى أن الوليمة واجبة أو سنة مؤكدة، فعفا في معنى الواجب حيث يسيء بتركها ويترتب عتاب، وإن لم يجب عقاب (وطعام يوم الثاني سنة) : يمكن أن يكون اليومان بعد العقد، أو الأول منهما قبل العقد والثاني بعده (وطعام يوم الثالث سمعة) : بضم السين أي سمعة ورياء ليسمع الناس وليرائيهم.

الھندیۃ: (343/5، ط: دار الفکر)
ولا بأس بأن يدعو يومئذ من الغد وبعد الغد، ثم ينقطع العرس من الغد وبعد الغد ثم ينقطع العرس والوليمة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1139 Mar 02, 2019
Khajoor khilanay say bhi waleemay valimay ki sunnat sunnah ada ho jae gee, The sunnah of walima is also performed / completed by feeding dates

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.