عنوان: نیند کی حالت میں کفریہ کلمات کہنے کا حکم(107175-No)

سوال: اگر کوئی شخص سو رہا ہو اور اور نیند کی حالت میں اس کی زبان سے کفریہ کلمات نکل جائیں، تو کیا وہ شخص ایمان سے خارج ہوجائے گا؟

جواب: واضح رہے کہ نیند کی حالت میں انسان کو اپنے اوپر قدرت و اختیار حاصل نہیں ہوتا ہے، لہذا اگر کسی شخص نے نیند میں کفریہ کلمہ ادا کردیا، تو اس سے وہ ایمان سے خارج نہیں ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی سنن ابن ماجۃ:

عن عائشة، أن رسول الله صلى الله عليه وسلم، قال: " رفع القلم عن ثلاثة: عن النائم حتى يستيقظ، وعن الصغير حتى يكبر، وعن المجنون حتى يعقل، أو يفيق

(ج: 1، ص: 658، ط: دار احیاء الکتب العربیۃ)

وفی الشامیۃ:

وفی التحریر وتبطل عباراتہ من الاسلام والردۃ والطلاق ، ولم توصف بخبر وانشاء وصدق وکذب کالحان الطیور اھ ومثلہ فی التلویح۔ فھذا صریح فی ان کلام النائم لایسمی کلاما لغۃ ولا شرعا بمنزلۃ المھمل۔

(ج: 3، ص: 243، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 233

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com